موج انفاس بھی اک تیغ رواں ہو جیسے

حبیب اشعر دہلوی

موج انفاس بھی اک تیغ رواں ہو جیسے

حبیب اشعر دہلوی

MORE BYحبیب اشعر دہلوی

    موج انفاس بھی اک تیغ رواں ہو جیسے

    زندگی کار گہ شیشہ گراں ہو جیسے

    دل پہ یوں عکس فگن ہے کوئی بھولی ہوئی یاد

    سر کہسار دھندلکے کا سماں ہو جیسے

    حاصل عمر وفا ہے بس اک احساس یقیں

    وہ بھی پروردۂ‌ آغوش گماں ہو جیسے

    مجھ سے وہ آنکھ چراتا ہے تو یوں لگتا ہے

    ساری دنیا مری جانب نگراں ہو جیسے

    آج اشعرؔ سے سر راہ ملاقات ہوئی

    کوئی درماندۂ‌ دل شعلہ بجاں ہو جیسے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY