موج گل موج صبا موج سحر لگتی ہے

جاں نثاراختر

موج گل موج صبا موج سحر لگتی ہے

جاں نثاراختر

MORE BY جاں نثاراختر

    موج گل موج صبا موج سحر لگتی ہے

    سر سے پا تک وہ سماں ہے کہ نظر لگتی ہے

    ہم نے ہر گام پہ سجدوں کے جلائے ہیں چراغ

    اب ہمیں تیری گلی راہ گزر لگتی ہے

    لمحے لمحے میں بسی ہے تری یادوں کی مہک

    آج کی رات تو خوشبو کا سفر لگتی ہے

    جل گیا اپنا نشیمن تو کوئی بات نہیں

    دیکھنا یہ ہے کہ اب آگ کدھر لگتی ہے

    ساری دنیا میں غریبوں کا لہو بہتا ہے

    ہر زمیں مجھ کو مرے خون سے تر لگتی ہے

    کوئی آسودہ نہیں اہل سیاست کے سوا

    یہ صدی دشمن ارباب ہنر لگتی ہے

    واقعہ شہر میں کل تو کوئی ایسا نہ ہوا

    یہ تو اخبار کے دفتر کی خبر لگتی ہے

    لکھنؤ کیا تری گلیوں کا مقدر تھا یہی

    ہر گلی آج تری خاک بسر لگتی ہے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    موج گل موج صبا موج سحر لگتی ہے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY