میرے ہونے میں کسی طور سے شامل ہو جاؤ

عرفان صدیقی

میرے ہونے میں کسی طور سے شامل ہو جاؤ

عرفان صدیقی

MORE BY عرفان صدیقی

    میرے ہونے میں کسی طور سے شامل ہو جاؤ

    تم مسیحا نہیں ہوتے ہو تو قاتل ہو جاؤ

    دشت سے دور بھی کیا رنگ دکھاتا ہے جنوں

    دیکھنا ہے تو کسی شہر میں داخل ہو جاؤ

    جس پہ ہوتا ہی نہیں خون دو عالم ثابت

    بڑھ کے اک دن اسی گردن میں حمائل ہو جاؤ

    وہ ستم گر تمہیں تسخیر کیا چاہتا ہے

    خاک بن جاؤ اور اس شخص کو حاصل ہو جاؤ

    عشق کیا کار ہوس بھی کوئی آسان نہیں

    خیر سے پہلے اسی کام کے قابل ہو جاؤ

    ابھی پیکر ہی جلا ہے تو یہ عالم ہے میاں

    آگ یہ روح میں لگ جائے تو کامل ہو جاؤ

    میں ہوں یا موج فنا اور یہاں کوئی نہیں

    تم اگر ہو تو ذرا راہ میں حائل ہو جاؤ

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    میرے ہونے میں کسی طور سے شامل ہو جاؤ نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY