میرے کاندھوں پہ ان کا چہرہ نمود پائے

طارق عثمانی

میرے کاندھوں پہ ان کا چہرہ نمود پائے

طارق عثمانی

MORE BYطارق عثمانی

    میرے کاندھوں پہ ان کا چہرہ نمود پائے

    تو عین ممکن ہے میری ہستی وجود پائے

    یہ اپنے مرشد سے میں نے سیکھا ہے گریہ کرنا

    اسی کی نسبت سے پھر حقیقی سجود پائے

    نثار اس خواب کے ہوئی ہے جو دید ان کی

    کہ جس کی تعبیر سے لبوں نے درود پائے

    یہ حوصلہ ہی تو ہے ہمارا وگرنہ کیا ہے

    ہم عشق والے جو اس تلاطم میں کود پائے

    بدن زمیں پر اگے وہ کچھ اس طرح سے طارقؔ

    کہ اس کے پیکر میں میری مٹی وجود پائے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے