میرے تصورات میں اب کوئی دوسرا نہیں

رام کرشن مضطر

میرے تصورات میں اب کوئی دوسرا نہیں

رام کرشن مضطر

MORE BYرام کرشن مضطر

    میرے تصورات میں اب کوئی دوسرا نہیں

    آپ کو جانتا ہوں میں غیر سے واسطا نہیں

    دیکھ تو اے نگاہ دوست کیا تجھے دل دیا نہیں

    کون ہے مجھ سے آشنا تو اگر آشنا نہیں

    دل کو سکون کر عطا جان کو بخش دے قرار

    تیرے کرم کی دیر ہے درد یہ لا دوا نہیں

    جس سے نہ ہو مرا گزر رہ نہیں تری رہ گزر

    جس پہ نہ میرا سر جھکے وہ ترا نقش پا نہیں

    چشم کرم کا شکریہ پرسش غم سے فائدہ

    کیا مری بے بسی کا حال آپ پر آئینہ نہیں

    ایک حسین عہد کی یاد دلا کے رہ گئی

    ان کی نظر نے دل سے آج اور تو کچھ کہا نہیں

    کیوں نہ کرم کے واسطے آپ سے التجا کروں

    آپ بتائیں کیا مجھے آپ کا آسرا نہیں

    دل میں ہے عکس آپ کا لب پہ ہے نام آپ کا

    آپ کا مضطرؔ حزیں آپ کو بھولتا نہیں

    مآخذ :
    • Raqs-e-bahar

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY