ملتا نہیں مزاج خود اپنی ادا میں ہے

ہوش ترمذی

ملتا نہیں مزاج خود اپنی ادا میں ہے

ہوش ترمذی

MORE BYہوش ترمذی

    ملتا نہیں مزاج خود اپنی ادا میں ہے

    تیری گلی سے آ کے صبا بھی ہوا میں ہے

    اے عشق تیری دوسری منزل بھی ہے کہیں

    مرنا ہے ابتدا میں تو کیا انتہا میں ہے

    لاتی ہے جب صبا تو چمکتے ہیں بام و در

    یہ روشنی سی کیا تری بوئے قبا میں ہے

    ہر رہ گزر نشاں ہے تری سمت کا مگر

    اقرار نا رسی بھی ہر اک نقش پا میں ہے

    توصیف حسن اصل میں ہے وصف حسن ساز

    بندوں سے جس کو پیار ہے یاد خدا میں ہے

    یہ تشنگی یہ پاس وفا یہ ہجوم غم

    کیا کاروان شوق کسی کربلا میں ہے

    سن کر کہ ہوشؔ نے بھی کیا ترک آرزو

    کہرام اک مچا ہوا شہر وفا میں ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY