مرے اندر روانی ختم ہوتی جا رہی ہے

احمد خیال

مرے اندر روانی ختم ہوتی جا رہی ہے

احمد خیال

MORE BYاحمد خیال

    مرے اندر روانی ختم ہوتی جا رہی ہے

    سو لگتا ہے کہانی ختم ہوتی جا رہی ہے

    اسے چھو کر لبوں سے پھول جھڑنے لگ گئے ہیں

    مری آتش فشانی ختم ہوتی جا رہی ہے

    سلگتے دشت میں اب دھوپ سہنا پڑ گئی ہے

    تمہاری سائبانی ختم ہوتی جا رہی ہے

    ہمارا دل زمانے سے الجھنے لگ گیا ہے

    تمہاری حکمرانی ختم ہوتی جا رہی ہے

    سمندر سے سمٹ کر جھیل بنتے جا رہے ہیں

    ہماری بے کرانی ختم ہوتی جا رہی ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے