مثال مشک زباں سے مری فسانہ گیا

قمر عباس قمر

مثال مشک زباں سے مری فسانہ گیا

قمر عباس قمر

MORE BYقمر عباس قمر

    مثال مشک زباں سے مری فسانہ گیا

    میں اک ترنم خوش لب جسے سنا نہ گیا

    گلوں کے عشق میں خاروں سے دوستی کر لی

    بس ایک مرغ چمن تھا جو عاشقانہ گیا

    ہوئی تھی رہنمائی مگر یہ جرم کا شوق

    اسی کے کوچۂ قاتل میں مجرمانہ گیا

    کبھی تصور جاناں کبھی تسلیٔ دل

    تمہاری یاد سے خالی کبھی رہا نہ گیا

    مرا یہ جرم بھی لکھ دے مرے نوشتے میں

    کہ میں تکلف الفت میں مخلصانہ گیا

    کتاب زیست کی تعبیر مرگ دل ہی تو ہے

    جسے سنا تو گیا ہے ابھی پڑھا نہ گیا

    سیاہ رات کی تنہائیاں خدا کی پناہ

    قمرؔ نژاد تھا دلبر تو دلبرانہ گیا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY