محبت کر کے لاکھوں رنج جھیلے بیکلی پائی

مضطر خیرآبادی

محبت کر کے لاکھوں رنج جھیلے بیکلی پائی

مضطر خیرآبادی

MORE BYمضطر خیرآبادی

    محبت کر کے لاکھوں رنج جھیلے بیکلی پائی

    وہ مجھ کو کیا ملے اک موت گویا جیتے جی پائی

    وہ بلبل ہوں کہ جس دن سے لٹا ہے آشیاں میرا

    اٹھا لایا میں اپنا دل سمجھ کر جو کلی پائی

    شکایت اس کی کیا تجھ سے یہ اپنی اپنی قسمت ہے

    کہ میری آنکھ کو آنسو ملے تو نے ہنسی پائی

    جہاں میں واقعی مضطرؔ کا بھی اک دم غنیمت تھا

    مگر افسوس تھوڑے دن جیا کم زندگی پائی

    مأخذ :
    • کتاب : Khirman (Part-1) (Pg. 124)
    • Author : Muztar Khairabadi
    • مطبع : Javed Akhtar (2015)
    • اشاعت : 2015

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY