محبت میں زیاں کاری مراد دل نہ بن جائے

تاجور نجیب آبادی

محبت میں زیاں کاری مراد دل نہ بن جائے

تاجور نجیب آبادی

MORE BYتاجور نجیب آبادی

    محبت میں زیاں کاری مراد دل نہ بن جائے

    یہ لا حاصل ہی عمر عشق کا حاصل نہ بن جائے

    مجھی پر پڑ رہی ہے ساری محفل میں نظر ان کی

    یہ دل داری حساب دوستاں در دل نہ بن جائے

    کروں گا عمر بھر طے راہ بے منزل محبت کی

    اگر وہ آستاں اس راہ کی منزل نہ بن جائے

    ترے انوار سے ہے نبض ہستی میں تڑپ پیدا

    کہیں سارا نظام کائنات اک دل نہ بن جائے

    کہیں رسوا نہ ہو اب شان استغنا محبت کی

    مری حالت تمہارے رحم کے قابل نہ بن جائے

    مآخذ:

    • کتاب : Noquush (Pg. B-328 E344)
    • مطبع : Nuqoosh Press Lahore (May June 1954)
    • اشاعت : May June 1954

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY