مداوائے دل دیوانہ کرتے

حسرتؔ موہانی

مداوائے دل دیوانہ کرتے

حسرتؔ موہانی

MORE BY حسرتؔ موہانی

    مداوائے دل دیوانہ کرتے

    یہ کرتے ہم تو کچھ اچھا نہ کرتے

    وفا صادق اگر ہوتی ہماری

    وہ کرتے بھی تو جور اتنا نہ کرتے

    ہم اچھا تھا جو بہر پردہ پوشی

    محبت کا تری چرچا نہ کرتے

    تمہاری فتنہ پردازی کا شکوا

    جو ہم کرتے تو کچھ بے جا نہ کرتے

    نگاہیں عاشقوں کی تھی ہوس کار

    وہ کیا کرتے اگر پردا نہ کرتے

    جو پھر ملنے کی ہوتی کچھ بھی امید

    تو ہم اس کے لیے کیا کیا نہ کرتے

    طلب کا حوصلہ ہوتا تو اک دن

    خطاب اس بت سے بیباکانہ نہ کرتے

    ہمارا پاس انہیں کچھ بھی جو ہوتا

    کسی کی اور ہم پروا نہ کرتے

    شکیبائی کا دم رکھتے تو حسرتؔ

    انہیں یوں شوق سے دیکھا نہ کرتے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY