مجھ کو آتا ہے تیمم نہ وضو آتا ہے

آغا شاعر قزلباش

مجھ کو آتا ہے تیمم نہ وضو آتا ہے

آغا شاعر قزلباش

MORE BYآغا شاعر قزلباش

    مجھ کو آتا ہے تیمم نہ وضو آتا ہے

    سجدہ کر لیتا ہوں جب سامنے تو آتا ہے

    یوں تو شکوہ بھی ہمیں آئینہ رو آتا ہے

    ہونٹ سل جاتے ہیں جب سامنے تو آتا ہے

    ہاتھ دھوئے ہوئے ہوں نیستی و ہستی سے

    شیخ کیا پوچھتا ہے مجھ سے وضو آتا ہے

    منتیں کرتی ہے شوخی کہ منا لوں تجھ کو

    جب مرے سامنے روٹھا ہوا تو آتا ہے

    پوچھتے کیا ہو تمناؤں کی حالت کیا ہے

    سانس کے ساتھ اب اشکوں میں لہو آتا ہے

    یار کا گھر کوئی کعبہ تو نہیں ہے شاعرؔ

    ہائے کم بخت یہیں مرنے کو تو آتا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY