مجھ کو فرقت کی اسیری سے رہائی ہوتی

امام بخش ناسخ

مجھ کو فرقت کی اسیری سے رہائی ہوتی

امام بخش ناسخ

MORE BYامام بخش ناسخ

    مجھ کو فرقت کی اسیری سے رہائی ہوتی

    کاش عیسیٰ کے عوض موت ہی آئی ہوتی

    عاشقی میں جو مزہ ہے تو یہی فرقت ہے

    لطف کیا تھا جو اگر اس سے جدائی ہوتی

    گر نہ ہو شمع تو معدوم ہیں پروانے بھی

    تو نہ ہوتا تو صنم کب یہ خدائی ہوتی

    غیر سے کرتے ہو ابرو کے اشارے ہر دم

    کبھی تلوار تو مجھ پر بھی لگائی ہوتی

    اس کی ہر دم کی نصیحت سے میں تنگ آیا ہوں

    کاش ناصح سے بھی آنکھ اس نے لڑائی ہوتی

    ہوں وہ غم دوست کہ سب اپنے ہی دل میں بھرتا

    غم عالم کی اگر اس میں سمائی ہوتی

    خط کے آغاز میں تو مجھ سے ہوا صاف تو کب

    لطف تب تھا کہ صفائی میں صفائی ہوتی

    ابر رحمت سے تو محروم رہی کشت مری

    کوئی بجلی ہی فلک تو نے گرائی ہوتی

    دشت پر خار میں مہندی کی ہوس بھی نکلی

    کب ہماری کف پا ورنہ حنائی ہوتی

    دھوئی کیوں اشک کے طوفان سے لوح محفوظ

    سرنوشت اپنی ہی ناسخؔ نے مٹائی ہوتی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY