مجھ کو ہر پھول سناتا تھا فسانہ تیرا (ردیف .. م)

اثر لکھنوی

مجھ کو ہر پھول سناتا تھا فسانہ تیرا (ردیف .. م)

اثر لکھنوی

MORE BYاثر لکھنوی

    مجھ کو ہر پھول سناتا تھا فسانہ تیرا

    تیرے دامن کی قسم اپنے گریباں کی قسم

    گونجتا رہتا تھا اک نغمہ مرے کانوں میں

    تپش آہنگیٔ مضراب رگ جاں کی قسم

    التفات نگہ ناز کا سودا تھا کبھی

    ختم وہ دور ہوا گردش دوراں کی قسم

    اب نہ وہ دل ہے نہ وہ ولولۂ عرض نیاز

    ہاتھ سے چھوٹے ہوئے گوشۂ داماں کی قسم

    مجھ کو برباد ہی رہنے دے تلافی سے گزر

    عشق احساں ہے گراں باریٔ احساں کی قسم

    ادب آموز محبت ہے محبت میری

    ورنہ کھاتا ترے توڑے ہوئے پیماں کی قسم

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے