مجھ سے بنتا ہوا تو تجھ کو بناتا ہوا میں

عمار اقبال

مجھ سے بنتا ہوا تو تجھ کو بناتا ہوا میں

عمار اقبال

MORE BYعمار اقبال

    مجھ سے بنتا ہوا تو تجھ کو بناتا ہوا میں

    گیت ہوتا ہوا تو گیت سناتا ہوا میں

    ایک کوزے کے تصور سے جڑے ہم دونوں

    نقش دیتا ہوا تو چاک گھماتا ہوا میں

    تم بناؤ کسی تصویر میں کوئی رستہ

    میں بناتا ہوں کہیں دور سے آتا ہوا میں

    ایک تصویر کی تکمیل کے ہم دو پہلو

    رنگ بھرتا ہوا تو رنگ بناتا ہوا میں

    مجھ کو لے جائے کہیں دور بہاتی ہوئی تو

    تجھ کو لے جاؤں کہیں دور اڑاتا ہوا میں

    اک عبارت ہے جو تحریر نہیں ہو پائی

    مجھ کو لکھتا ہوا تو تجھ کو مٹاتا ہوا میں

    میرے سینے میں کہیں خود کو چھپاتا ہوا تو

    تیرے سینے سے ترا درد چراتا ہوا میں

    کانچ کا ہو کے مرے آگے بکھرتا ہوا تو

    کرچیوں کو تری پلکوں سے اٹھاتا ہوا میں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے