مجھے تو عشق میں اب عیش و غم برابر ہے

بقا اللہ بقاؔ

مجھے تو عشق میں اب عیش و غم برابر ہے

بقا اللہ بقاؔ

MORE BY بقا اللہ بقاؔ

    مجھے تو عشق میں اب عیش و غم برابر ہے

    بہ رنگ سایہ وجود و عدم برابر ہے

    نہ کچھ ہے عیش سے بالیدگی نہ غم سے گداز

    ہمارے کام میں سب نوش و سم برابر ہے

    چلا ہے قافلہ پر ہم سے نا توانوں کو

    ہزار گام سے اب اک قدم برابر ہے

    بہ چشم مردم روشن ضمیر گر پوچھو

    تو قدر جام مے و جام جم برابر ہے

    خزاں کے روز جو دیکھا تو عندلیبوں کو

    صفیر بوم سے اب زیر و بم برابر ہے

    بہت شگفتہ ہیں گلشن میں گرچہ لالہ و گل

    تمہارے چہرے سے پر کوئی کم برابر ہے

    یہ رند دے گئے لقمہ تجھے تو عذر نہ مان

    ترا تو شیخ تنور و شکم برابر ہے

    وہ مست ناز و ادا جس کو روز وعدے کے

    شکست جام و شکست قسم برابر ہے

    بقاؔ جو بار نہ دے ہم کو اپنی محفل میں

    تو مرگ و زندگی اپنی بہم برابر ہے

    مآخذ:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY