ملاتے ہو اسی کو خاک میں جو دل سے ملتا ہے

داغؔ دہلوی

ملاتے ہو اسی کو خاک میں جو دل سے ملتا ہے

داغؔ دہلوی

MORE BY داغؔ دہلوی

    ملاتے ہو اسی کو خاک میں جو دل سے ملتا ہے

    مری جاں چاہنے والا بڑی مشکل سے ملتا ہے

    those who meet you lovingly then into dust you grind

    those who bear affection, dear, are very hard to find

    کہیں ہے عید کی شادی کہیں ماتم ہے مقتل میں

    کوئی قاتل سے ملتا ہے کوئی بسمل سے ملتا ہے

    festive joy in places, elsewhere gloom of genocide

    some like the murderer rejoice, some victim-like abide

    پس پردہ بھی لیلیٰ ہاتھ رکھ لیتی ہے آنکھوں پر

    غبار ناتوان قیس جب محمل سے ملتا ہے

    Lailaa covers up her eyes even behind the veil

    when her carriage is beset by dust of majnuu.n frail

    بھرے ہیں تجھ میں وہ لاکھوں ہنر اے مجمع خوبی

    ملاقاتی ترا گویا بھری محفل سے ملتا ہے

    you do possess a myriad skills , a throng of talents bring

    one who meets you is as though he meets a gathering

    مجھے آتا ہے کیا کیا رشک وقت ذبح اس سے بھی

    گلا جس دم لپٹ کر خنجر قاتل سے ملتا ہے

    what envy I feel for my neck, even in slaughter's face

    when the dagger of the killer takes it in embrace

    بظاہر با ادب یوں حضرت ناصح سے ملتا ہوں

    مرید خاص جیسے مرشد کامل سے ملتا ہے

    it's obvious so respectfully the preacher I do greet

    just as a special pupil does the perfect master meet

    مثال گنج قاروں اہل حاجت سے نہیں چھپتا

    جو ہوتا ہے سخی خود ڈھونڈ کر سائل سے ملتا ہے

    like the wealth of Croseus, from poor he does not hide,

    a philanthrope seeks out the needy, himself, to provide

    جواب اس بات کا اس شوخ کو کیا دے سکے کوئی

    جو دل لے کر کہے کم بخت تو کس دل سے ملتا ہے

    an answer to her mishievous comment what can there be

    who takes my heart and says "you fool, you meet me heartlessly"

    چھپائے سے کوئی چھپتی ہے اپنے دل کی بیتابی

    کہ ہر تار نفس اپنا رگ بسمل سے ملتا ہے

    can restlessness be hidden then, however may be tried

    as every ragged breath now does with wounded veins collide

    عدم کی جو حقیقت ہے وہ پوچھو اہل ہستی سے

    مسافر کو تو منزل کا پتا منزل سے ملتا ہے

    seek from the people of this world, the truth of death's domain

    for in this path from present stops, past's knowledge will obtain

    غضب ہے داغؔ کے دل سے تمہارا دل نہیں ملتا

    تمہارا چاند سا چہرہ مہ کامل سے ملتا ہے

    tis wonder that your heart rejects this heart, so scarred, of mine

    your moon-like face resembles when, the full-moon's face divine

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    فصیح اکمل

    فصیح اکمل

    نعمان شوق

    ملاتے ہو اسی کو خاک میں جو دل سے ملتا ہے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites