امید سے کم چشم خریدار میں آئے

شہریار

امید سے کم چشم خریدار میں آئے

شہریار

MORE BY شہریار

    امید سے کم چشم خریدار میں آئے

    ہم لوگ ذرا دیر سے بازار میں آئے

    سچ خود سے بھی یہ لوگ نہیں بولنے والے

    اے اہل جنوں تم یہاں بے کار میں آئے

    یہ آگ ہوس کی ہے جھلس دے گی اسے بھی

    سورج سے کہو سایۂ دیوار میں آئے

    بڑھتی ہی چلی جاتی ہے تنہائی ہماری

    کیا سوچ کے ہم وادئ انکار میں آئے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites