مشتعل ہو گیا وہ غنچہ دہن دانستہ

شمس رمزی

مشتعل ہو گیا وہ غنچہ دہن دانستہ

شمس رمزی

MORE BY شمس رمزی

    مشتعل ہو گیا وہ غنچہ دہن دانستہ

    آ گئی لفظوں میں کیوں اس کے چبھن دانستہ

    جب بھی لایا ہے وہ ماتھے پہ شکن دانستہ

    یوں لگا جیسے ہوا چاند گہن دانستہ

    ٹھیس لگتی ہے انا کو تو برس پڑتے ہیں

    لب کشا ہوتے نہیں اہل سخن دانستہ

    سربلندی ہمیں منظور تھی حق کی خاطر

    اس لیے چوم لیے دار و رسن دانستہ

    جتنے بھی اہل سیاست ہیں وطن دشمن ہیں

    سب نے پھونکا ہے محبت کا چمن دانستہ

    یہ بھی سچ اینٹ کا پتھر سے دیا ہم نے جواب

    یہ بھی سچ بیر ہے ان سے نہ جلن دانستہ

    اس سے بہتر کہاں اظہار غم دل کرتے

    یوں تراشا کیے لفظوں کے بدن دانستہ

    اس سے دشمن ہی نہیں موت بھی کترائے گی

    جس نے بھی باندھ لیا سر سے کفن دانستہ

    شاید اس دور کی تہذیب کو غیرت آئے

    ہم نے چھیڑی ہے حکایات کہن دانستہ

    جس کو وہ چاہے عطا کر دے یہ وصف تقدیس

    کون پاتا ہے غزل کہنے کا فن دانستہ

    سہمے سہمے سے ہیں پیڑوں پہ پرندے اے شمسؔ

    اس نے گھولی ہے فضاؤں میں گھٹن دانستہ

    مآخذ:

    • کتاب : Gubar-e-shams (Pg. 51)
    • Author : Shams Ramzi
    • مطبع : Urdu Tahzeeb, Delhi (1997)
    • اشاعت : 1997

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY