نہ ہم محو خیال ابروے خم دار سوتے ہیں

معروف دہلوی

نہ ہم محو خیال ابروے خم دار سوتے ہیں

معروف دہلوی

MORE BYمعروف دہلوی

    نہ ہم محو خیال ابروے خم دار سوتے ہیں

    سپاہی ہیں زبس باندھے ہوئے تلوار سوتے ہیں

    تمہارا سوتے سوتے چونک پڑنا کھب گیا دل میں

    کہ اکثر خود بخود ہو ہو کے ہم بیدار سوتے ہیں

    الٰہی ہم کو ہے کس کا خیال خواب و بیداری

    جو لاکھوں ہار اٹھتے ہیں ہزاروں یار سوتے ہیں

    نگاہ مست ساقی میں ہے کیا دارائے بے ہوشی

    کہ ساغر لگ رہا ہے منہ سے اور مے خوار سوتے ہیں

    نہ کر وسواس دل میں چل وہاں معروفؔ بے کھٹکے

    کہ دربان اونگھتا ہے اور چوکیدار سوتے ہیں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY