نہ کر تو اے دل مجبور آہ زیر لبی

ثاقب کانپوری

نہ کر تو اے دل مجبور آہ زیر لبی

ثاقب کانپوری

MORE BYثاقب کانپوری

    نہ کر تو اے دل مجبور آہ زیر لبی

    نہ ٹوٹ جائے کہیں یہ سکوت نیم شبی

    یہ کاوش غم پنہاں ہے عشق کا حاصل

    روا نہیں تری فرقت میں آرزو طلبی

    خدا کرے یہیں رک جائے گردش دوراں

    ہے راز دار محبت سکوت نیم شبی

    کہاں ہوا ہے تو شکوہ گزار محرومی

    جہاں ہے سانس بھی لینا کمال بے ادبی

    نمود حسن ہے گویا سراب کا عالم

    یہ کائنات ہے ہنگامہ ہائے بوالعجبی

    دکھا رہا ہوں نشیب و فراز عالم کے

    مگر یہ دل ہے کہ ہے محو انتہا طلبی

    مجھے بھی فخر ہے اس سلسلے میں اے ثاقبؔ

    خدا کا شکر کہ ہوں ہاشمی و مطلبی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY