نہ کنشت و کلیسا سے کام ہمیں در دیر نہ بیت حرم سے غرض

بیدم شاہ وارثی

نہ کنشت و کلیسا سے کام ہمیں در دیر نہ بیت حرم سے غرض

بیدم شاہ وارثی

MORE BYبیدم شاہ وارثی

    نہ کنشت و کلیسا سے کام ہمیں در دیر نہ بیت حرم سے غرض

    کہ ازل سے ہمارے سجدوں کو رہی تیرے ہی نقش قدم سے غرض

    جو تو مہر ہے تو ذرہ ہم ہیں تو بحر ہے تو قطرہ ہم ہیں

    تو صورت ہے ہم آئینہ ہمیں تجھ سے غرض تجھے ہم سے غرض

    نہ نشاط وصال نہ ہجر کا غم نہ خیال بہار نہ خوف خزاں

    نہ سقر کا خطر ہے نہ شوق ارم نہ ستم سے حذر نہ کرم سے غرض

    رکھا کوچۂ عشق میں جس نے قدم ہوا حضرت عشق کا جس پہ کرم

    اسے آپ سے بھی سروکار نہیں جو غرض ہے تو اپنے صنم سے غرض

    تری یاد ہو اور دل بیدمؔ ہو ترا درد ہو اور دل بیدمؔ ہو

    بیدمؔ کو رہے ترے غم سے غرض ترے غم کو رہے بیدمؔ سے غرض

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے