نہ پوچھ دوست کی کتنا خراب ہوتا ہے

دیپک پرجاپتی خالص

نہ پوچھ دوست کی کتنا خراب ہوتا ہے

دیپک پرجاپتی خالص

MORE BYدیپک پرجاپتی خالص

    نہ پوچھ دوست کی کتنا خراب ہوتا ہے

    بس اتنا جان زمانہ خراب ہوتا ہے

    یہ عشق ہے نہ جو یہ دل کی اک خرابی ہے

    خرابیوں کا نتیجہ خراب ہوتا ہے

    عجب مزاج کی دنیا ہے یہ کہ اس کے لیے

    خراب اچھا تو اچھا خراب ہوتا ہے

    حضور چھوڑیئے یہ امن و ومن کی باتیں

    سیاسی لوگوں کا دھندا خراب ہوتا ہے

    کوئی کسی بھی سمے جھٹ سے توڑ سکتا ہے

    امید سب سے لگانا خراب ہوتا ہے

    شراب پیسہ انا خواب عشق یا کہ سخن

    کسی بھی شے کا ہو نشہ خراب ہوتا ہے

    اداس مت ہو میاں ہے یہ امتحان زیست

    اس امتحان میں پرچہ خراب ہوتا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY