نالہ اس شور سے کیوں میرا دہائی دیتا

شیخ ابراہیم ذوقؔ

نالہ اس شور سے کیوں میرا دہائی دیتا

شیخ ابراہیم ذوقؔ

MORE BYشیخ ابراہیم ذوقؔ

    نالہ اس شور سے کیوں میرا دہائی دیتا

    اے فلک گر تجھے اونچا نہ سنائی دیتا

    دیکھ چھوٹوں کو ہے اللہ بڑائی دیتا

    آسماں آنکھ کے تل میں ہے دکھائی دیتا

    لاکھ دیتا فلک آزار گوارہ تھے مگر

    ایک تیرا نہ مجھے درد جدائی دیتا

    دے دعا وادیٔ پر خار جنوں کو ہر گام

    داد یہ تیری ہے اے آبلہ پائی دیتا

    روش اشک گرا دیں گے نظر سے اک دن

    ہے ان آنکھوں سے یہی مجھ کو دکھائی دیتا

    منہ سے بس کرتے کبھی یہ نہ خدا کے بندے

    گر حریصوں کو خدا ساری خدائی دیتا

    پنجۂ مہر کو بھی خون شفق میں ہر روز

    غوطے کیا کیا ہے ترا دست حنائی دیتا

    کون گھر آئینے کے آتا اگر وہ گھر میں

    خاکساری سے نہ جاروب صفائی دیتا

    میں ہوں وہ صید کہ پھر دام میں پھنستا جا کر

    گر قفس سے مجھے صیاد رہائی دیتا

    خوگر ناز ہوں کس کا کہ مجھے ساغر مے

    بوسۂ لب نہیں بے چشم نمائی دیتا

    دیکھ گر دیکھنا ہے ذوقؔ کہ وہ پردہ نشیں

    دیدۂ روزن دل سے ہے دکھائی دیتا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY