نالوں سے میرے کب تہ و بالا جہاں نہیں

مفتی صدرالدین آزردہ

نالوں سے میرے کب تہ و بالا جہاں نہیں

مفتی صدرالدین آزردہ

MORE BYمفتی صدرالدین آزردہ

    نالوں سے میرے کب تہ و بالا جہاں نہیں

    کب آسماں زمین و زمیں آسماں نہیں

    قاتل کی چشم تر نہ ہو یہ ضبط آہ دیکھ

    جوں شمع سر کٹے پہ اٹھا یاں دھواں نہیں

    اے بلبلان شعلہ دم اک نالہ اور بھی

    گم کردہ راہ باغ ہوں یاد آشیاں نہیں

    اس بزم میں نہیں کوئی آگاہ ورنہ کب

    واں خندہ زیر لب ادھر اشک نہاں نہیں

    اے دل تمام نفع ہے سودائے عشق میں

    اک جان کا زیاں ہے سو ایسا زیاں نہیں

    ناز و نگہ روش سبھی لاگو ہیں جان کے

    ہے کون ادا وہ تیری کہ جو جاں ستاں نہیں

    ملنا ترا یہ غیر سے ہو بہر مصلحت

    ہم کو تو سادگی سے تری یہ گماں نہیں

    آزردہ تک بھی کچھ نہ ہے اس کے روبرو

    مانا کہ آپ سا کوئی جادو بیاں نہیں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY