نایاب چیز کون سی بازار میں نہیں

غلام مرتضی راہی

نایاب چیز کون سی بازار میں نہیں

غلام مرتضی راہی

MORE BYغلام مرتضی راہی

    نایاب چیز کون سی بازار میں نہیں

    لیکن میں ان کے چند خریدار میں نہیں

    چھو کر بلندیوں کو پلٹنا ہے اب مجھے

    کھانے کو میرے گھاس بھی کہسار میں نہیں

    آتا تھا جس کو دیکھ کے تصویر کا خیال

    اب تو وہ کیل بھی مری دیوار میں نہیں

    عرفان و آگہی کی یہ ہم کس ہوا میں ہیں

    جنبش تک اس کے پردۂ اسرار میں نہیں

    اگلا سا مجھ میں شوق شہادت نہیں اگر

    پہلی سی کاٹ بھی تری تلوار میں نہیں

    مآخذ :
    • کتاب : Kulliyat-e-Rahi (Pg. 221)
    • Author : Ghulam Murtaza Rahi
    • مطبع : Educational Publishing House (2012)
    • اشاعت : 2012

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY