نہیں عشق میں اس کا تو رنج ہمیں کہ قرار و شکیب ذرا نہ رہا

بہادر شاہ ظفر

نہیں عشق میں اس کا تو رنج ہمیں کہ قرار و شکیب ذرا نہ رہا

بہادر شاہ ظفر

MORE BY بہادر شاہ ظفر

    نہیں عشق میں اس کا تو رنج ہمیں کہ قرار و شکیب ذرا نہ رہا

    غم عشق تو اپنا رفیق رہا کوئی اور بلا سے رہا نہ رہا

    in love I harbour no regret, that peace, patience are nowhere

    sorrow is still my intimate, if no one else, I do not care

    دیا اپنی خودی کو جو ہم نے اٹھا وہ جو پردہ سا بیچ میں تھا نہ رہا

    رہے پردے میں اب نہ وہ پردہ نشیں کوئی دوسرا اس کے سوا نہ رہا

    when I erased the "self" in me, the veil no longer was between

    no longer shrouded was He; save Him no other could be seen

    نہ تھی حال کی جب ہمیں خبر رہے دیکھتے اوروں کے عیب و ہنر

    پڑی اپنی برائیوں پر جو نظر تو نگاہ میں کوئی برا نہ رہا

    while unknowing of myself, in others faults did often see

    when my own shortcomings saw, found no one else as bad as me

    ترے رخ کے خیال میں کون سے دن اٹھے مجھ پہ نہ فتنۂ روز جزا

    تری زلف کے دھیان میں کون سی شب مرے سر پہ ہجوم بلا نہ رہا

    --------

    --------

    in serving wine to me today, if she, alas, does now delay

    impermanent, this age of youth, this time of joy shall go away

    ہمیں ساغر بادہ کے دینے میں اب کرے دیر جو ساقی تو ہائے غضب

    کہ یہ عہد نشاط یہ دور طرب نہ رہے گا جہاں میں سدا نہ رہا

    in ages has the moon-faced one deigned to reveal herself to me

    my calm, composure I have lost, she's lost her veiled timidity

    کئی روز میں آج وہ مہر لقا ہوا میرے جو سامنے جلوہ نما

    مجھے صبر و قرار ذرا نہ رہا اسے پاس حجاب و حیا نہ رہا

    --------

    --------

    ترے خنجر و تیغ کی آب رواں ہوئی جب کہ سبیل ستم زدگاں

    گئے کتنے ہی قافلے خشک زباں کوئی تشنۂ آب بقا نہ رہا

    --------

    --------

    مجھے صاف بتائے نگار اگر تو یہ پوچھوں میں رو رو کے خون جگر

    ملے پاؤں سے کس کے ہیں دیدۂ تر کف پا پہ جو رنگ حنا نہ رہا

    --------

    --------

    اسے چاہا تھا میں نے کہ روک رکھوں مری جان بھی جائے تو جانے نہ دوں

    کئے لاکھ فریب کروڑ فسوں نہ رہا نہ رہا نہ رہا نہ رہا

    pierced by a thousand darts of pain, writhing in dust I do remain

    as by the twin-edged scimitar of airs and grace I have been slain

    لگے یوں تو ہزاروں ہی تیر ستم کہ تڑپتے رہے پڑے خاک پہ ہم

    ولے ناز و کرشمہ کی تیغ دو دم لگی ایسی کہ تسمہ لگا نہ رہا

    deem him not a human being, however wise he may appear

    in pleasure he forgets the Lord, and in anger Him does not fear

    ظفرؔ آدمی اس کو نہ جانئے گا وہ ہو کیسا ہی صاحب فہم و ذکا

    جسے عیش میں یاد خدا نہ رہی جسے طیش میں خوف خدا نہ رہا

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    حبیب ولی محمد

    حبیب ولی محمد

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نہیں عشق میں اس کا تو رنج ہمیں کہ قرار و شکیب ذرا نہ رہا نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites