نقاب چہرے پہ باتیں لعاب دار کرے

دنیش کمار

نقاب چہرے پہ باتیں لعاب دار کرے

دنیش کمار

MORE BYدنیش کمار

    نقاب چہرے پہ باتیں لعاب دار کرے

    وہ رہنما ہے سیاست کا کاروبار کرے

    یہ صرف خوابوں کتابوں کی بات لگتی ہے

    کہ اک غریب کی امداد مال دار کرے

    نئے زمانے کا رہزن نیا سلیقہ ہے

    وہ لوٹتا ہے مگر پہلے ہوشیار کرے

    چراغ لے کے بھی ڈھونڈھیں گے تو ملے گی نہیں

    جہاں میں ایک بھی ہستی جو ماں سا پیار کرے

    ہوا کے زور سے ہی کشتیاں نہیں چلتیں

    کہ ناخدا بھی خدا سے ذرا گہار کرے

    وہ گل بدن ہے مکمل بہار سے بڑھ کر

    بس اس کا ذکر ہی موسم کو خوش گوار کرے

    نہ جانے کون سی بستی کا تو ہے باشندہ

    تجھے دنیشؔ کوئی غم نہ بے قرار کرے

    مآخذ :
    • کتاب : Word File Mail By Salim Saleem

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY