نومید کرے دل کو نہ منزل کا پتا دے

فضیل جعفری

نومید کرے دل کو نہ منزل کا پتا دے

فضیل جعفری

MORE BYفضیل جعفری

    نومید کرے دل کو نہ منزل کا پتا دے

    اے رہ گزر عشق ترے کیا ہیں ارادے

    ہر رات گزرتا ہے کوئی دل کی گلی سے

    اوڑھے ہوئے یادوں کے پر اسرار لبادے

    بن جاتا ہوں سر تا بہ قدم دست تمنا

    ڈھل جاتے ہیں اشکوں میں مگر شوق ارادے

    اس چشم فسوں گر میں نظر آتی ہے اکثر

    اک آتش خاموش کہ جو دل کو جلا دے

    آزردۂ الفت کو غم زندگی جیسے

    تپتے ہوئے جنگل میں کوئی آگ لگا دے

    یادوں کے مہ و مہر تمناؤں کے بادل

    کیا کچھ نہ وہ سوغات سر دشت وفا دے

    یاد آتی ہے اس حسن کی یوں جعفریؔ جیسے

    تنہائی کے غاروں سے کوئی خود کو صدا دے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY