نظر سے جس کی اب مستور ہوں میں

نفیسہ سلطانہ انا

نظر سے جس کی اب مستور ہوں میں

نفیسہ سلطانہ انا

MORE BYنفیسہ سلطانہ انا

    نظر سے جس کی اب مستور ہوں میں

    اسی کی یاد سے معمور ہوں میں

    چٹانوں کی طرح مد مقابل

    مگر اندر سے چکنا چور ہوں میں

    شب ظلمت نہیں حوا کی بیٹی

    اجالا ہوں سحر کا نور ہوں میں

    محبت کا تقاضہ ہے مروت

    سمجھنا یہ نہیں مجبور ہوں میں

    وفا کا پیار کا پیکر ہوں لیکن

    جو ہو صیاد تو زنبور ہوں میں

    ہوا لے کر اڑی ہے زرد پتے

    چمن میں نرگس رنجور ہوں میں

    نشاں اس کی جبیں کا کہہ رہا ہے

    تجلی سے جلا ہوں طور ہوں میں

    اناؔ ٹوٹی فقط رسوائیوں سے

    خوشامد سے تو کوسوں دور ہوں میں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY