نگاہ کرنے میں لگتا ہے کیا زمانہ کوئی

صابر ظفر

نگاہ کرنے میں لگتا ہے کیا زمانہ کوئی

صابر ظفر

MORE BYصابر ظفر

    نگاہ کرنے میں لگتا ہے کیا زمانہ کوئی

    پیمبری نہ سہی دکھ پیمبرانہ کوئی

    اک آدھ بار تو جاں وارنی ہی پڑتی ہے

    محبتیں ہوں تو بنتا نہیں بہانہ کوئی

    میں تیرے دور میں زندہ ہوں تو یہ جانتا ہے

    ہدف تو میں تھا مگر بن گیا نشانہ کوئی

    اب اس قدر بھی یہاں ظلم کو پناہ نہ دو

    یہ گھر گرا ہی نہ دے دست غائبانہ کوئی

    اجالتا ہوں میں نعلین پائے لخت جگر

    کہ مدرسے کو چلا علم کا خزانہ کوئی

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نگاہ کرنے میں لگتا ہے کیا زمانہ کوئی نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY