نیند چبھنے لگی ہے آنکھوں میں

خلیل مامون

نیند چبھنے لگی ہے آنکھوں میں

خلیل مامون

MORE BYخلیل مامون

    نیند چبھنے لگی ہے آنکھوں میں

    کب تلک جاگنا ہے راتوں میں

    تم اگر یوں ہی بات کرتے رہے

    بیت جائے گا وقت باتوں میں

    انگلیاں ہو گئیں فگار اپنی

    چھپ گیا ہے گلاب کانٹوں میں

    شاید اپنا پتہ بھی مل جائے

    جھانکتا ہوں تری نگاہوں میں

    سب ہے تیرے سوال میں پنہاں

    کچھ نہیں ہے مرے جوابوں میں

    جو نہیں مل سکا حقیقت میں

    ڈھونڈھتا پھر رہا ہوں خوابوں میں

    فیصلہ تو تمہیں کو کرنا ہے

    دیکھتے کیا ہو تم گواہوں میں

    مصلحت کوش ہو گیا مامونؔ

    گھر کے تنقید کرنے والوں میں

    مآخذ:

    • کتاب : Sanson Ke Paar (Pg. 21)
    • Author : Khalil Mamoon
    • مطبع : Educational Publishing House, Delhi (2015)
    • اشاعت : 2015

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY