نثار شمع ہونے بزم میں پروانہ آ پہنچا

پیارے لال رونق دہلوی

نثار شمع ہونے بزم میں پروانہ آ پہنچا

پیارے لال رونق دہلوی

MORE BYپیارے لال رونق دہلوی

    نثار شمع ہونے بزم میں پروانہ آ پہنچا

    قریب منزل دیوانگی دیوانہ آ پہنچا

    ترانے حمد کے گلشن میں برگ گل سے سنتا ہوں

    زبان غنچہ پہ کیوں کر ترا افسانہ آ پہنچا

    اسے کہتے ہیں مل کر خاک میں اکسیر ہو جانا

    ہوا سر سبز وہ زیر زمیں جو دانہ آ پہنچا

    سفر اس بزم سے کرنے کو پھر رجعت کی ٹھانی ہے

    گلے پھر آج ملنے شمع سے پروانہ آ پہنچا

    رقم ہے داستان عشق بلبل پتے پتے پر

    گلوں تک کس طرح گلشن میں یہ افسانہ آ پہنچا

    کھنچی تھی کیا تری تصویر ترکیب عناصر سے

    کہ مشت خاک میں انداز معشوقانہ آ پہنچا

    پرستار صنم ہو کر جو ڈھونڈی راہ کعبہ کی

    قدم بہکا ہوا اپنا سر مے خانہ آ پہنچا

    بنیں گے آج پھر سرمست صہبائے سخن رونقؔ

    قدم پھر اپنا قرب محفل رندانہ آ پہنچا

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY