پہچان زندگی کی سمجھ کر میں چپ رہا

اسرار اکبر آبادی

پہچان زندگی کی سمجھ کر میں چپ رہا

اسرار اکبر آبادی

MORE BYاسرار اکبر آبادی

    پہچان زندگی کی سمجھ کر میں چپ رہا

    اپنے ہی پھینکتے رہے پتھر میں چپ رہا

    لمحے اندھیرے دشت میں پیتے رہے مجھے

    مجھ میں تھا روشنی کا سمندر میں چپ رہا

    میرے لہو کے رنگ کا ایسا اثر ہوا

    منصف سے بولتا رہا خنجر میں چپ رہا

    بوجھل اداس رات تھی خاموش تھی ہوا

    پھولوں کی آگ میں جلا بستر میں چپ رہا

    اسرارؔ کیوں کسی سے میں کرتا شکایتیں

    وہ آخری تھا راہ کا پتھر میں چپ رہا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے