پہلی محبتوں کے زمانے گزر گئے

خاطر غزنوی

پہلی محبتوں کے زمانے گزر گئے

خاطر غزنوی

MORE BYخاطر غزنوی

    پہلی محبتوں کے زمانے گزر گئے

    ساحل پہ ریت چھوڑ کے دریا اتر گئے

    تیری انا نیاز کی کرنیں بجھا گئی

    جذبے جو دل میں ابھرے تھے شرمندہ کر گئے

    دل کی فضائیں آ کے کبھی خود بھی دیکھ لو

    تم نے جو داغ بخشے تھے کیا کیا نکھر گئے

    تیرے بدن کی لو میں کرشمہ نمو کا تھا

    غنچے جو تیری سیج پہ جاگے سنور گئے

    صدیوں میں چند پھول کھلے اور ثمر بنے

    لمحوں میں آندھیوں کے تھپیڑوں سے مر گئے

    شب بھر بدن مناتے رہے جشن ماہتاب

    آئی سحر تو جیسے اندھیروں سے بھر گئے

    محفل میں تیری آئے تھے لیکر نظر کی پیاس

    محفل سے تیری لے کے مگر چشم تر گئے

    قطرے کی جرأتوں نے صدف سے لیا خراج

    دریا سمندروں میں ملے اور مر گئے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    پہلی محبتوں کے زمانے گزر گئے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY