پتھر کے خدا وہاں بھی پائے

کیفی اعظمی

پتھر کے خدا وہاں بھی پائے

کیفی اعظمی

MORE BYکیفی اعظمی

    پتھر کے خدا وہاں بھی پائے

    ہم چاند سے آج لوٹ آئے

    دیواریں تو ہر طرف کھڑی ہیں

    کیا ہو گئے مہربان سائے

    جنگل کی ہوائیں آ رہی ہیں

    کاغذ کا یہ شہر اڑ نہ جائے

    لیلیٰ نے نیا جنم لیا ہے

    ہے قیس کوئی جو دل لگائے

    ہے آج زمیں کا غسل صحت

    جس دل میں ہو جتنا خون لائے

    صحرا صحرا لہو کے خیمے

    پھر پیاسے لب فرات آئے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    پتھر کے خدا وہاں بھی پائے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY