پھولوں میں وہ خوشبو وہ صباحت نہیں آئی

اعتبار ساجد

پھولوں میں وہ خوشبو وہ صباحت نہیں آئی

اعتبار ساجد

MORE BYاعتبار ساجد

    پھولوں میں وہ خوشبو وہ صباحت نہیں آئی

    اب تک ترے آنے کی شہادت نہیں آئی

    موسم تھا نمائش کا مگر آنکھ نہ کھولی

    جاناں ترے زخموں کو سیاست نہیں آئی

    جو روح سے آزار کی مانند لپٹ جائے

    ہم پر وہ گھڑی اے شب وحشت نہیں آئی

    اے دشت انا الحق ترے قربان ابھی تک

    وہ منزل اظہار صداقت نہیں آئی

    ہم لوگ کہ ہیں ماؤں سے بچھڑے ہوئے بچے

    حصے میں کسی کے بھی محبت نہیں آئی

    ہم نے تو بہت حرف تری مدح میں سوچے

    افسوس کہ سنوائی کی نوبت نہیں آئی

    لرزے بھی نہیں شہر کے حساس در و بام

    دل راکھ ہوئے پھر بھی قیامت نہیں آئی

    ساجدؔ وہ سحر جس کے لئے رات بھی روئی

    آئی تو سہی حسب ضرورت نہیں آئی

    مأخذ :
    • کتاب : Muntakhab Gazle.n (Pg. 27)
    • Author : Nasir Zaidi
    • مطبع : Zahid Malik (1983)
    • اشاعت : 1983

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY