پچھلے کو اٹھ کھڑا نہ ہو درد جگر کہیں

یگانہ چنگیزی

پچھلے کو اٹھ کھڑا نہ ہو درد جگر کہیں

یگانہ چنگیزی

MORE BYیگانہ چنگیزی

    دلچسپ معلومات

    (1913ء)

    پچھلے کو اٹھ کھڑا نہ ہو درد جگر کہیں

    پہنچے نہ اڑتے اڑتے کہیں سے خبر کہیں

    کیفیت حیات سے خالی ہوا ہے دل

    او ساقیٔ ازل مرا پیمانہ بھر کہیں

    مر جائیں گے تڑپ کے اسیران بدنصیب

    سن پائیں گے جو مژدۂ وحشت اثر کہیں

    پھڑکا کیے مرقع عالم کے حسن پر

    ٹھہری کبھی نہ اہل ہوس کی نظر کہیں

    آخر حجاب و شرم کی حد بھی ہے مہرباں

    پردہ الٹ نہ دے مری آہ سحر کہیں

    دن وعدۂ وصال کا نزدیک آ چکا

    پھر دیر کیا ہے یاسؔ ارے کمبخت مر کہیں

    مأخذ :
    • کتاب : Kulliyat-e-Yagana (Pg. 152)
    • Author : Meerza Yagana Changezi Lukhnawi
    • مطبع : Farib Book Depot (P) Ltd. (2005)
    • اشاعت : 2005

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے