پندار زہد ہو کہ غرور برہمنی

حمایت علی شاعر

پندار زہد ہو کہ غرور برہمنی

حمایت علی شاعر

MORE BYحمایت علی شاعر

    پندار زہد ہو کہ غرور برہمنی

    اس دور بت شکن میں ہے ہر بت شکستنی

    صرصر چلے کہ تند بگولوں کا رقص ہو

    موج نمو رواں ہے تو ہر گل شگفتنی

    گل‌‌ چین و گل فروش کی خاطر ہے فصل گل

    اور قسمت جنوں ہے فقط چاک دامنی

    دیوار ابر کھینچیے کرنوں کی راہ میں

    ذروں میں قید کیجیئے سورج کی روشنی

    موج نفس سے لرزے ہے تار رگ حیات

    پھیلی ہے شہر دل میں وہ پر ہول سنسنی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے