قدم قدم پہ عجب حادثات غم گزرے

ماہر الحمیدی

قدم قدم پہ عجب حادثات غم گزرے

ماہر الحمیدی

MORE BYماہر الحمیدی

    قدم قدم پہ عجب حادثات غم گزرے

    جہاں جہاں سے تری جستجو میں ہم گزرے

    غم حیات کو لے کر جدھر سے ہم گزرے

    ہجوم حادثہ نو بہ نو بہم گزرے

    نہ راس آئے مری زندگی مجھے اے دوست

    کبھی گراں جو مرے دل پہ تیرا غم گزرے

    قدم قدم پہ ہوا امتحان ہوش و خرد

    خدا کا شکر کہ دامن بچا کے ہم گزرے

    نظر میں رقص کناں ہے تصور رخ دوست

    یہ کہہ دو باد صبا سے دبے قدم گزرے

    جبیں جھکے تو سمٹ آئے آستان حبیب

    وہ سجدہ کیا جو بہ قید در حرم گزرے

    ملی جہاں سے متاع خوشی زمانے کو

    ہم اس مقام سے ماہرؔ بہ چشم نم گزرے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY