قلم دل میں ڈبویا جا رہا ہے

احمد ندیم قاسمی

قلم دل میں ڈبویا جا رہا ہے

احمد ندیم قاسمی

MORE BYاحمد ندیم قاسمی

    قلم دل میں ڈبویا جا رہا ہے

    نیا منشور لکھا جا رہا ہے

    میں کشتی میں اکیلا تو نہیں ہوں

    مرے ہم راہ دریا جا رہا ہے

    سلامی کو جھکے جاتے ہیں اشجار

    ہوا کا ایک جھونکا جا رہا ہے

    مسافر ہی مسافر ہر طرف ہیں

    مگر ہر شخص تنہا جا رہا ہے

    میں اک انساں ہوں یا سارا جہاں ہوں

    بگولہ ہے کہ صحرا جا رہا ہے

    ندیمؔ اب آمد آمد ہے سحر کی

    ستاروں کو بجھایا جا رہا ہے

    RECITATIONS

    احمد ندیم قاسمی

    احمد ندیم قاسمی

    احمد ندیم قاسمی

    قلم دل میں ڈبویا جا رہا ہے احمد ندیم قاسمی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY