راز دل لاتے ہیں زباں تک ہم

حسن بریلوی

راز دل لاتے ہیں زباں تک ہم

حسن بریلوی

MORE BYحسن بریلوی

    راز دل لاتے ہیں زباں تک ہم

    دکھ بھریں اے خدا کہاں تک ہم

    اور وہ ہم سے کھنچتے جاتے ہیں

    منتیں کرتے ہیں جہاں تک ہم

    نہ اڑا باغباں کہ گلشن دل

    اور ہیں آمد خزاں تک ہم

    آپ کے لطف نے تو قہر کیا

    خوب تھے جور آسماں تک ہم

    آسماں تک گیا ہے سیل سرشک

    دل کو رویا کریں کہاں تک ہم

    ان کا آنا بھی اب نہیں منظور

    جان سے تنگ ہیں یہاں تک ہم

    تیرا پیغام بھی سنا دیں گے

    اے حسنؔ پہنچیں تو وہاں تک ہم

    مأخذ :
    • کتاب : Intekhab-e-Sukhan(Jild-2) (Pg. 132)
    • Author : Hasrat Mohani
    • مطبع : uttar pradesh urdu academy (1983)
    • اشاعت : 1983

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY