رکھتے ہیں خضر سے نہ غرض رہ نما سے ہم

جگر مراد آبادی

رکھتے ہیں خضر سے نہ غرض رہ نما سے ہم

جگر مراد آبادی

MORE BY جگر مراد آبادی

    رکھتے ہیں خضر سے نہ غرض رہ نما سے ہم

    چلتے ہیں بچ کے دور ہر اک نقش پا سے ہم

    مانوس ہو چلے ہیں جو دل کی صدا سے ہم

    شاید کہ جی اٹھے تری آواز پا سے ہم

    یا رب نگاہ شوق کو دے اور وسعتیں

    گھبرا اٹھے جمال جہت آشنا سے ہم

    مخصوص کس کے واسطے ہے رحمت تمام

    پوچھیں گے ایک دن یہ کسی پارسا سے ہم

    او مست ناز حسن تجھے کچھ خبر بھی ہے

    تجھ پر نثار ہوتے ہیں کس کس ادا سے ہم

    یہ کون چھا گیا ہے دل و دیدہ پر کہ آج

    اپنی نظر میں آپ ہیں ناآشنا سے ہم

    RECITATIONS

    خالد مبشر

    خالد مبشر

    خالد مبشر

    رکھتے ہیں خضر سے نہ غرض رہ نما سے ہم خالد مبشر

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites