رنگوں کی وحشتوں کا تماشا تھی بام شام

منیر نیازی

رنگوں کی وحشتوں کا تماشا تھی بام شام

منیر نیازی

MORE BY منیر نیازی

    رنگوں کی وحشتوں کا تماشا تھی بام شام

    طاری تھا ہر مکاں پہ جلال دوام شام

    گلدستۂ جہات تھا نیرنگ راہ عشق

    تھا اک طلسم حسن خیابان دام شام

    آگے کی منزلوں کی طرف شام کا سفر

    جیسے شبوں کے دل میں تھا شہر قیام شام

    باندھے ہوئے ہیں وقت سبھی اس کے حکم میں

    ہے جس خدا کے ہاتھ میں کار نظام شام

    دھندلا گئی ہے شام شب خام سے منیرؔ

    خالی ہوا کشش کی شرابوں سے جام شام

    مآخذ:

    • Book: Muasir (Pg. 467)
    • Author: Habibullah
    • مطبع: Maktaba muasir 304 alfaisal palaza, Shahrah qaid-e-azam, lahore

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites