رس میں ڈوبا ہوا لہراتا بدن کیا کہنا

فراق گورکھپوری

رس میں ڈوبا ہوا لہراتا بدن کیا کہنا

فراق گورکھپوری

MORE BYفراق گورکھپوری

    رس میں ڈوبا ہوا لہراتا بدن کیا کہنا

    کروٹیں لیتی ہوئی صبح چمن کیا کہنا

    نگہ ناز میں یہ پچھلے پہر رنگ خمار

    نیند میں ڈوبی ہوئی چندر کرن کیا کہنا

    باغ جنت پہ گھٹا جیسے برس کے کھل جائے

    یہ سہانی تری خوشبوئے بدن کیا کہنا

    ٹھہری ٹھہری سی نگاہوں میں یہ وحشت کی کرن

    چونکے چونکے سے یہ آہوئے ختن کیا کہنا

    روپ سنگیت نے دھارا ہے بدن کا یہ رچاؤ

    تجھ پہ لہلوٹ ہے بے ساختہ پن کیا کہنا

    جیسے لہرائے کوئی شعلہ کمر کی یہ لچک

    سر بسر آتش سیال بدن کیا کہنا

    جس طرح جلوۂ فردوس ہواؤں سے چھنے

    پیرہن میں ترے رنگینیٔ تن کیا کہنا

    جلوہ و پردے کا یہ رنگ دم نظارہ

    جس طرح ادھ کھلے گھونگھٹ میں دلہن کیا کہنا

    دم تقریر کھل اٹھتے ہیں گلستاں کیا کیا

    یوں تو اک غنچۂ نورس ہے دہن کیا کہنا

    دل کے آئینے میں اس طرح اترتی ہے نگاہ

    جیسے پانی میں لچک جائے کرن کیا کہنا

    لہلہاتا ہوا یہ قد یہ لہکتا جوبن

    زلف سو مہکی ہوئی راتوں کا بن کیا کہنا

    تو محبت کا ستارہ تو جوانی کا سہاگ

    حسن لو دیتا ہے لعل یمن کیا کہنا

    تیری آواز سویرا تری باتیں تڑکا

    آنکھیں کھل جاتی ہیں اعجاز سخن کیا کہنا

    زلف شب گوں کی چمک پیکر سیمیں کی دمک

    دیپ مالا ہے سر گنگ و جمن کیا کہنا

    نیلگوں شبنمی کپڑوں میں بدن کی یہ جوت

    جیسے چھنتی ہو ستاروں کی کرن کیا کہنا

    مأخذ :
    • کتاب : Irtiqa, 36 Firaaq No. (Pg. 429)
    • Author : Hasan Abid, Wahid Bashiir, Rahat Sayeed
    • مطبع : Irtiqa Matbuaat, Karachi, (pakistan)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY