رسم ہی نیند کی آنکھوں سے اٹھا دی گئی کیا

منظور ہاشمی

رسم ہی نیند کی آنکھوں سے اٹھا دی گئی کیا

منظور ہاشمی

MORE BYمنظور ہاشمی

    رسم ہی نیند کی آنکھوں سے اٹھا دی گئی کیا

    یا مرے خواب کی تعبیر بتا دی گئی کیا

    آسماں آج ستاروں سے بھی خالی کیوں ہے

    دولت گریۂ جاں رات لٹا دی گئی کیا

    وہ جو دیوار تھی اک عشق و ہوس کے مابین

    موسم شوق میں اس بار گرا دی گئی کیا

    اب تو اس کھیل میں کچھ اور مزا آنے لگا

    جان بھی داؤ پہ اس بار لگا دی گئی کیا

    آج دیوانے کے لہجے کی کھنک روشن ہے

    اس کی آواز میں آواز ملا دی گئی کیا

    آج بیمار کے چہرے پہ بہت رونق ہے

    پھر مسیحائی کی افواہ اڑا دی گئی کیا

    مأخذ :
    • کتاب : Sukhan Aabaad (Pg. 72)
    • Author : Manzoor Hashmi
    • مطبع : Manzoor Hashmi (2005)
    • اشاعت : 2005

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY