رشتۂ رسم محبت مت توڑ

قلق میرٹھی

رشتۂ رسم محبت مت توڑ

قلق میرٹھی

MORE BY قلق میرٹھی

    رشتۂ رسم محبت مت توڑ

    توڑ کر دل کو قیامت مت توڑ

    کام ناکامی بھی اک کام سہی

    توڑ امید کو ہمت مت توڑ

    رات فرقت کی پڑی ہے اے دل

    ایک ہی نالے میں طاقت مت توڑ

    اس کی رحمت کو نہ بے کار سمجھ

    مے و میخانے کی نیت مت توڑ

    دیکھ اچھی نہیں یہ خر مستی

    ساغر بادۂ فرصت مت توڑ

    اے دل امید رہائی مت باندھ

    اور آفت سر آفت مت توڑ

    پوچھ مت لذت مے اے واعظ

    جانور دام شریعت مت توڑ

    صحن مسجد کو کیے جا پامال

    قید آئین طریقت مت توڑ

    مے کدہ دیکھ کے جنت کو نہ بھول

    حرص سے بند قناعت مت توڑ

    اس کا احسان اٹھانا ہے ہمیں

    گردن اے بار ندامت مت توڑ

    اے قلقؔ بت کدے میں باندھ احرام

    ہم سے للہ رفاقت مت توڑ

    مآخذ:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY