ثابت رہا فلک مرے نالوں کے سامنے

منیرؔ  شکوہ آبادی

ثابت رہا فلک مرے نالوں کے سامنے

منیرؔ  شکوہ آبادی

MORE BYمنیرؔ  شکوہ آبادی

    ثابت رہا فلک مرے نالوں کے سامنے

    ٹھہری سپر حباب کے بھالوں کے سامنے

    موسیٰ ہیں غش میں گیسوؤں والوں کے سامنے

    گل ہے چراغ طور بھی کالوں کے سامنے

    پھولوں کا رنگ زرد ہے گالوں کے سامنے

    سنبل میں بل نہیں ترے بالوں کے سامنے

    رکھوائے جھاڑ اس نے نہالوں کے سامنے

    قلمیں لگیں بلور کی ڈالوں کے سامنے

    جاتا ہوں جب خزاں میں نہالوں کے سامنے

    آنکھوں سے نہریں بہتی ہیں تھالوں کے سامنے

    پھولے شفق تو زرد ہو گالوں کے سامنے

    پانی بھرے گھٹا ترے بالوں کے سامنے

    تارے ہوئے غروب خط و خال دیکھ کر

    گوروں کے پاؤں اٹھ گئے گالوں کے سامنے

    آنکھوں میں پھرتے ہیں نہیں آتے ہیں روبرو

    پردے پڑے ہیں دیکھنے والوں کے سامنے

    دیکھا ہے عاشقوں نے برہمن کی آنکھ سے

    ہر بت خدا ہے چاہنے والوں کے سامنے

    چھٹ جائیں گے اسیر چھپا زلف خم نجم

    کٹتی ہیں بیڑیاں ترے بالوں کے سامنے

    بیتاب دست شوق ہیں جوبن کے روبرو

    بوسہ میں جاں بلب ترے گالوں کے سامنے

    افراط‌‌ مے سے مجھ کو یہ جوش سرور ہے

    بجواؤں جل ترنگ میں پیالوں کے سامنے

    جلد بدن ہے تختۂ مشق سپاہ غم

    رہتی ہے یہ کتاب رسالوں کے سامنے

    آنکھیں تمہاری دیکھ کے کچھ سوجھتا نہیں

    بھولا ہوں چوکڑی میں غزالوں کے سامنے

    دروازوں پر بتوں کے لگایا کئے الاؤ

    ہولی جلائی ہم نے شوالوں کے سامنے

    زلفوں میں دیکھتا ہوں ترا چہرۂ صبیح

    لبریز جام شیر ہے کالوں کے سامنے

    تیرے گدا سے بند ہے عالم کا ناطقہ

    آتے نہیں جواب سوالوں کے سامنے

    کھینچے بتوں نے اپنی طرف زاہدوں کے دل

    قبلہ نما پھرے ہیں شوالوں کے سامنے

    چوری سے بوسۂ کف پا لیں جو اے پری

    ہونٹ اپنے چوم لوں ترے گالوں کے سامنے

    پہنچا فلک کو فقر کا رتبہ حضور عیش

    کمبل چڑھے ہیں چرخ دو شالوں کے سامنے

    اہل کتاب ہیں صف مژگاں کے روبرو

    کاغذ کے دستے آئے رسالوں کے سامنے

    فیاض سائلوں سے نہیں کرتے سرکشی

    شیشوں کے سر جھکے ہیں پیالوں کے سامنے

    دست جفا اٹھائیں گے کیا جسم زار پر

    کانٹا ہوں تیغ ناز کے چھالوں کے سامنے

    شیشے کو حسن‌ گرم نے پارہ بنا دیا

    آئینے اڑ گئے ترے گالوں کے سامنے

    تیغ نگہ کو موتیوں کی ڈاب چاہئے

    آئینہ رکھ کے دیکھیے چھالوں کے سامنے

    جلتے رہے بتوں کی حضوری میں شمع رو

    پریاں ستی ہوئی ہیں شوالوں کے سامنے

    ہم چشموں پر لگائی ہیں اس بت نے گولیاں

    توڑے ہوئے ہیں شیر غزالوں کے سامنے

    جادہ بنت بنا مری وحشت کے فیض سے

    گوٹے کے گو کہر ہوئے چھالوں کے سامنے

    میرے ہنر کا کوئی نہیں قدرداں منیرؔ

    شرمندہ ہوں میں اپنے کمالوں کے سامنے

    مآخذ:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY