سانسوں میں بسے ہو تم آنکھوں میں چھپا لوں گا

شاذ تمکنت

سانسوں میں بسے ہو تم آنکھوں میں چھپا لوں گا

شاذ تمکنت

MORE BY شاذ تمکنت

    سانسوں میں بسے ہو تم آنکھوں میں چھپا لوں گا

    جب چاہوں تمہیں دیکھوں آئینہ بنا لوں گا

    یادوں سے کہو میری بالیں سے چلی جائیں

    اب اے شب تنہائی آرام ذرا لوں گا

    رنجش سے جدائی تک کیا سانحہ گزرا ہے

    کیا کیا مجھے دعویٰ تھا جب چاہوں منا لوں گا

    تصویر خیالی ہے ہر آنکھ سوالی ہے

    دنیا مجھے کیا دے گی دنیا سے میں کیا لوں گا

    کب لوٹ کے آؤ گے اصرار نہیں کرتا

    اتنا مرے بس میں ہے میں عمر گھٹا لوں گا

    کیا تہمتیں دنیا نے اے شاذؔ اٹھائی ہیں

    اک تہمت ہستی تھی سوچا تھا اٹھا لوں گا

    مآخذ:

    • Book: Kulliyat-e- Shaz Tamkanat (Pg. 435)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites