سانسوں میں رگ و پے میں سمایا ہے کوئی اور

شاہد ماہلی

سانسوں میں رگ و پے میں سمایا ہے کوئی اور

شاہد ماہلی

MORE BYشاہد ماہلی

    سانسوں میں رگ و پے میں سمایا ہے کوئی اور

    ہے زیست کسی اور کی جیتا ہے کوئی اور

    آنکھوں نے بسائی ہے کوئی اور ہی صورت

    اس دل کے نہاں خانے میں ٹھہرا ہے کوئی اور

    کیا طرفہ تماشا ہے کہ اس دل کی صدا کو

    سنتا ہے کوئی اور سمجھتا ہے کوئی اور

    اک آگ ہے جو دل میں بجھی جاتی ہے ہر پل

    خرمن سے جو اٹھتا ہے وہ شعلہ ہے کوئی اور

    لاشے ہیں کنارے پہ پڑے تشنہ لبوں کے

    جو پیاس بجھاتا ہے وہ دریا ہے کوئی اور

    ہر صبح پہ سایہ سا ہے کچھ تلخئ شب کا

    ہر شام کو اندیشۂ فردا ہے کوئی اور

    اک بوئے رفاقت سی فضاؤں میں ہے شاہدؔ

    اس کوچۂ بیگانہ سے گزرا ہے کوئی اور

    مآخذ
    • کتاب : Kahein Kuch Nahein Hota (Pg. 122)
    • Author : Shahid Mahuli
    • مطبع : Miaar Publications (2003)
    • اشاعت : 2003

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY